پیر 06 جولائی 2020

پی ایس ایکس حملہ: دہشتگردوں کو مقامی لاجسٹک سپورٹ فراہم کی گئی، تفتیشی حکام

کراچی اسٹاک ایکسچینج پر حملے کی ابتدائی تحقیقات میں تفتیشی حکام کا خیال ہے اس بار دہشت گردوں کو مقامی طور پر لاجسٹک سپورٹ فراہم کی گئی۔

تفتیشی حکام کے مطابق اسٹاک ایکسچینج  پر حملے میں استعمال گاڑی 4 روز  پہلے پرانی سبزی منڈی پر شوروم سے نقد رقم  پر سلمان حمل عرف نوتک نے اپنے شناختی کارڈ پر خریدی۔

شو روم مالک نے بینک سے لیز گاڑی بغیر ٹرانسفر کرائے بیچنے سے انکار کردیا تھا۔

حکام کے مطابق کالعدم تنظیم نے شہر میں دوسری بار دہشتگردی کی بڑی کارروائی کی کوشش کی، اس سے پہلے چینی قونصل خانے پر بھی حملے کی کوشش کی گئی تھی جسے ناکام بنا دیا گیا تھا۔ 

تفتیشی حکام کا خیال ہے اس بار دہشت گردوں کو مقامی طور پر لوجسٹک سپورٹ فراہم کی گئی، یہ سپورٹ اسی گٹھ جوڑھ کا حصہ ہوسکتی ہے جس میں کراچی اور سندھ میں حالیہ دہشتگردی کی گئی۔

تفتیشی حکام کا کہنا ہے کہ دہشتگردوں کا مقصد اسٹاک ایکسچینج میں داخل ہوکر لوگوں کو یرغمال بنانا تھا، ان کے قبضے سے نیٹو سپلائی کی 40 رشین رائفل گرینیڈ اور ایک رائفل، رشین اور امریکن 25 ہینڈ گرینیڈز، 4 سب مشین گن، 15 لوڈڈ، 3 تباہ میگزین اور 40 گولیاں، سب مشین گن کے گولیوں کے 26 پیکٹس بھی ملے۔

علاوہ ازیں سب مشین گن کے چلے ہوئے 307 خول، پیٹرول کی 3 بوتلیں، 2 طرح کے دستی بموں کے 12 خالی ڈبے، 16 ہینڈ گرینیڈ سیفٹی کورکس، 6 شولڈر بیگ اور چنے کے 4 پیکٹس بھی ملے۔

خیال رہے کہ کراچی میں پاکستان اسٹاک ایکسچینج پر دہشتگردوں نے حملہ کردیا جس کے نتیجے میں ایک پولیس اہلکار اور اسٹاک ایکسچینج کے 2 سیکیورٹی گارڈ شہید ہوگئے جب کہ فورسز کی جوابی کارروائی میں چاروں دہشتگرد مارے گئے۔