جمعرات 06 اگست 2020

پاک بحریہ خطرات سے نمٹنے کی صلاحیت رکھتی ہے، نیول چیف

چیف آف دی نیول اسٹاف نے پاکستان نیوی وار کالج کا دورہ کیا اور 49ویں نیوی اسٹاف کورس کے شرکاء سے خطاب کیا۔

اُن کی آمد پر کمانڈنٹ پاکستان نیوی وار کالج ریئر ایڈمرل محمد زبیر شفیق نے ان کا استقبال کیا۔ 

 

کورس کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے چیف آف دی نیول اسٹاف نے جنوبی ایشیاء کے سیکیورٹی معاملات کے تناظر میں بدلتے ہوئے جیو اسٹرٹیجک ماحول اور بحری سیکیورٹی چیلینجز کا ذکر کیا۔

امیر البحر نے پاک بحریہ کو ایک مضبوط بحری قوت بنانے کے لیے مختلف دفاعی منصوبوں کا ذکر کیا، جو ان کے وژن کا حصہ ہیں۔ نیول چیف نے مزید کہا کہ پاک بحریہ جنگی تیاری، نظریاتی دائرہ کار کی حفاظت اور پاکستان کے بحری مفاد کے تخفظ کے لیے میری ٹائم سیکٹر کی ترویج کے ذریعے تمام روایتی و غیر روایتی خطرات سے نمٹنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ 

چیف آف دی نیول اسٹاف نے کورس کے شرکاء کو مشورہ دیا کہ وہ بحری سرحدوں کی حفاظت کرنے کے اپنے مقدس مقصد کے حصول میں پاک بحریہ کی بنیادی اقدار یعنی ایمان کی مضبوطی، کردار کی پختگی، بہادری اور استقامت سے کام لیں۔اور اس سلسلے میں اسلامی اقدار اور نظریہ پاکستان سے تحریک حاصل کریں۔

 

قبل ازیں کورس کے شرکاء نے 'ہندتوا نظریے اور بھارت اور پاکستان کے مسلمانوں پر اس کے اثرات' کے موضوع پر تحقیقی مقالہ پیش کیا۔ امیر البحر نے کورس کے شرکاء کی پیشہ وارانہ صلاحیتیں بڑھانے اور انھیں بہترین تعلیمی معیار فراہم کرنے پر پاکستان نیوی وار کالج کی کاوشوں کو سراہا۔

 

پاکستان نیوی وار کالج پاک بحریہ کا صفِ اول کا تربیتی ادارہ ہے جہاں پاک بحریہ، دیگرمسلح افواج اور دوست ممالک کی افواج کے افسران کو مستقبل میں اہم کمانڈ اور اسٹاف تعیناتیوں کے لیے پیشہ وارانہ اور دفاعی تربیت فراہم کی جاتی ہے۔