ھفتہ 19 ستمبر 2020

نیشنل ٹی 20 کیلئے سلیکشن کے معیار پر بھی انگلیاں اٹھنے لگیں، سینئر کھلاڑیوں کیساتھ کیا سلوک کیا گیا؟ افسوسناک تفصیلات منظرعام پر

Fingers were also pointed at the selection criteria for the National T20. What was done with the senior players? Tragic details in public

لاہور (دھرتی نیوز) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نیشنل ٹی 20 ٹورنامنٹ کیلئے سلیکشن کے معیار پر انگلیاں اٹھنے لگیں جبکہ کئی نوجوان کرکٹرز کو نظر انداز کرتے ہوئے چلے ہوئے کارتوس منتخب کر لئے گئے ہیں۔ 

تفصیلات کے مطابق قومی ٹی 20 ٹورنامنٹ کا 30ستمبر سے ملتان میں آغاز ہو گا جس کیلئے فرسٹ اور سیکنڈ الیونزکا اعلان بدھ کو کیا گیا تھا اور 28 سے زائد اوسط سے 5 نصف سنچریوں سمیت 802 رنزبنانے والے سمیع اسلم کو سیکنڈ الیون میں رکھا گیا ہے۔ دوسری جانب صرف 13 کی اوسط سے 69 رنز سکور کرنے والے عماد بٹ کو مستقبل کیلئے تیار کرنے کا ارادہ کرتے ہوئے فرسٹ الیون میں شامل کرلیا گیا۔

حیرت کی بات یہ ہے کہ نیوزی لینڈ کیخلاف 2001ءمیں ڈیبیو کرنے والے عمران فرحت ریٹائرڈ کرکٹر ہونے کے باوجود فرسٹ الیون میں جبکہ 24سالہ سمیع اسلم سیکنڈ الیون میں کھیلیں گے، محمد عرفان جونیئر گزشتہ سال محمد عباس سے بہتر پرفارمنس کے باوجود فرسٹ الیون میں جگہ نہیں بنا سکے۔ بلوچستان کی ٹیم میں عمران فرحت کے ساتھ اکبرالرحمان جیسے سینئرز شامل ہیں، انٹرنیشنل سطح پر ٹی 20 کرکٹ کیلئے ناموزوں سمجھے جانے والے محمد عباس کو بھی جگہ مل گئی، 2 سال پہلے فرسٹ کلاس میں پرفارم نہ کرنے والے صلاح الدین بھی ٹیم میں شامل ہیں۔

گزشتہ سیزن میں بلوچستان کی سیکنڈ الیون کے ٹاپ 5 میں شامل عظیم گھمن اس سال کسی بھی سکواڈ میں نہیں، انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کیلئے ٹیلنٹ تلاش کرنے کا نعرہ لگانے والے پی سی بی سلیکٹرز نے دیگر کئی چلے ہوئے کارتوسوں سمیت ٹیسٹ سپیشلسٹ اسدشفیق کو بھی سندھ ٹیم کا حصہ بنا دیا۔

سینئر کرکٹر فواد عالم کو فرسٹ سے سیکنڈ الیون میں دھکیلتے ہوئے کپتان بنانے کی مہربانی کر دی گئی ہے،دوسری جانب عامر خان جیسے باصلاحیت نوجوان باﺅلر کو خیبر پختونخوا کی سیکنڈ الیون میں شامل کیا گیا،اسی طرح کسی وقت مستقبل کی پلاننگ کا حصہ قرار دئیے جانے والے دلبر حسین سدرن پنجاب اور سلمان ارشاد ناردرن کی بی ٹیموں میں شامل ہوئے ہیں۔