ھفتہ 19 ستمبر 2020

موٹروے زیادتی کیس ملزم عابد علی کی تمام تفصیلات دھرتی نیوز نے حاصل کر لیں

All the details of the accused Abid Ali in the motorway abuse case were obtained by Dharti News
میڈیا ذرائع کے مطابق وزیراعلیٰ کو جمع کرائی گئی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ موٹروے زیادتی کیس میں ایک ملزم کی شناخت ہوگئی ہے

فورٹ عباس (دھرتی نیوز)دھرتی نیوز کو خصوصی ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ لاہور موٹروے پر زیادتی واقعے میں نامزد ملزم عابد ملہی فورٹ عباس کے گاوں 260/HR سے ہے۔

عابد ولد اکبر تھانہ فورٹ عباس کے مقدمہ نمبر 264/13 میں نامزد ملزم تھا۔ ملزم نے دوران ڈکیٹی ماں اور باپ کے سامنے 15 سالہ بیٹی سے جنسی  زیادتی کی تھی۔ 

ملزم اپنے ماموں کے قتل میں بھی شریک ہے۔


ملزم عابد علی کی تمام تفصیلات


ملزم 2013 سے فورٹ عباس سے مفرور ہونے کے بعد لاہور میں رہائش  پزیر تھا۔ ملزم نے 2013ء میں ڈکیتی کے دوران ماں بیٹی کو زیادتی کا نشانہ بنایا۔ 6 ماہ تک کیس زیر سماعت رہنے کے بعد ملزموں نے ڈرا دھمکا کر مدعی سے صلح کر  لی۔

بتاتے چلیں کہ  لاہور موٹروےزیادتی کیس کی تحقیقات میں اہم پیش رفت سامنے آئی ہے۔ ایک ملزم کا ڈی این اے میچ کر گیا ہے۔ مبینہ مرکزی ملزم عابد بہاولنگر کے علاقے فورٹ عباس کا رہائشی ہے۔ 2013 ء میں ڈکیتی کے دوران ماں بیٹی سے اجتماعی زیادتی کے واقعے میں ملوث تھا۔ملزم نے اپنے 4 ساتھیوں کے ہمراہ یہ واردات کی تھی۔ چھ ماہ تک کیس زیر سماعت رہنے کے بعد ملزموں نے ڈرا دھمکا کر مدعی سے صلح کر لی تھی۔

بدنامی کے ڈر سے متاثرہ خاندان بھی وہ علاقہ چھوڑ گئے تھے۔اہل علاقہ کے دباؤ پر ملزم عابد اور اس کی فیملی نے علاقہ چھوڑ دیا تھا۔مبینہ ملزم عابد اور اس کا خاندان 5 سال قبل فورٹ عباس سے چھانگا مانگا منتقل ہو گیا تھا۔بتایا گیا ملزم کا خاندان جرائم میں ملوث ہے کیونکہ وہ اپنی بہن کو بھی قتل کر چکے ہیں۔

بتایا جاتا ہے کہ ملزم ایک بیٹی کا باپ ہے،جب کہ اس نے پسند کی شادی کی تھی۔ دوسری جانب موٹروے زیادتی کیس کی ابتدائی تحقیقاتی رپورٹوزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کو پیش کردی گئی۔

ملزم عابد علی کی تمام تفصیلات

میڈیا ذرائع کے مطابق وزیراعلیٰ کو جمع کرائی گئی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ موٹروے زیادتی کیس میں ایک ملزم کی شناخت ہوگئی ہے،ملزم عابد ملہی فورٹ عباس کا رہائشی ہے، ملزم کی شناخت ڈی این اے میچ ہونے کی بنا پر ممکن ہوئی، خاتون کے لباس سے ڈی این اے میچ ہونے والے ملزم کا پہلے بھی کریمنل رکارڈ ہے جہاں ملزم کا ڈی این اے 2013ء کے ڈیٹا بیس سے میچ ہوتا ہے۔ 

دھرتی نیوز دھرتی کی ہر خبر سے رکھے باخبر